ONLINE ORDER
Muhammad Nadeem Bhabha
Search Tumharay Saath Rehna Hai | تمہارے ساتھ رہنا ہے
Nazmen - نظمیں

بغاوت

بہت کٹھن کسی دل کے حرف کو لکھنا
سنبھالاجاتا نہیں ہجر میں کہ ہوں کمزور
سِتم تو یہ ہے مجھے ہجر کا عذاب مِلا
وہی عذاب جو سورج گہن میں جھیلتا ہے
وہی عذاب جو مغرب طلوع کرتا ہے
کِسے خبر کہ اندھیرے میں پھیلتا ہُوا غم
نہ مارتا ہے مجھے اورنہ خود ہی مرتا ہے
قلم کی نوک پہ اب روشنائی ختم ہوئی
خدا کے ہوتے ہوئے کیوں خُدائی ختم ہوئی
قلم اُتار دیا میں نے انگلیوں پر سے
بلاوا آیا ہے مجھ کو نہ جانے کس گھر سے
نہ جانے کون وہاں مجھ کو لے کے جائے گا
نہ جانے کون وہاں میرا گھر بنائے گا
(مرے خیال میں بس اِتنی نظم کافی ہے )