ONLINE ORDER
Muhammad Nadeem Bhabha
Search Tumharay Saath Rehna Hai | تمہارے ساتھ رہنا ہے
Nazmen - نظمیں

آخری جست

جوانی اُس گلی کی دھول میں لپٹی ہوئی میں چھوڑ آیا ہوں
وہ رشتے توڑ آیا ہوں جو زنجیروں کی صورت تھے
وہ گلیا ں چھوڑ آیا ہوں جو منزل تک پہنچتی تھیں
نہ جانے کیوں
چراغِ آخرِ شب کی طرح بجھنے سے پہلے میں
بہت جلنے لگا ہو
تھکا ہارا مسافر ہوں مگر پھر بھی
میں اپنی حیثیّت سے تیز تر چلنے لگا ہوں
کہ اب کی با ر جو منزل چُنی میں نے
وہ میرے وہم سے لے کر یقیں کی پختگی تک ہے
ہزاروں قہقہوں سے ہجر کی افسردگی تک ہے
مِرے ہمراز تُو تو جانتا ہو گا کہ زندہ رہنے کی خاطر
بہت سی خواہشوں کے ساتھ دھوکہ کرنا پڑتا ہے
کبھی مرنے سے بھی پہلے اچانک مرنا پڑتا ہے