ONLINE ORDER
Muhammad Nadeem Bhabha
Search Haal | حال
Ghazlen - غزلیں

گزر چکے ہیں جو ان کے نشاں ہی دیکھ آئیں

گزر چکے ہیں جو اُن کے نشاں ہی دیکھ آئیں
بجھی ہے آگ تو اُس کا دھواں ہی دیکھ آئیں
گزشتگان کی محرومیاں ہی دیکھ آئیں
کھنڈر میں بکھری ہوئی رسیّاں ہی دیکھ آئیں
ضرورتیں نہ سہی خواہشیں تو پوری ہوں
خرید سکتے نہیں تو دُکاں ہی دیکھ آئیں
طواف کرتے ہوئے دل پہ ہاتھ رکھتے ہوئے
ہم اپنے یار کا خالی مکاں ہی دیکھ آئیں
گریز کرتی ہوئی خلق سے ذرا ہٹ کر
کلام کرتی ہوئی کھڑکیاں ہی دیکھ آئیں