عشق کی اُ س نماز کا کوئی امام تھا ضرور
یاد..." />
عشق کی اُ س نماز کا کوئی امام تھا ضرور
یاد..." />
ONLINE ORDER
Muhammad Nadeem Bhabha
Search Tumharay Saath Rehna Hai | تمہارے ساتھ رہنا ہے
Ghazlen - غزلیں

ایک سخن ہوا نہیں ایک کلام تھا ضرور

ایک سخن ہوا نہیں ایک کلام تھا ضرور
میرا تو ذکر ہی نہ تھا پر تِرا نام تھا ضرور
کانپ رہے تھے میرے ہاتھ، چیخ رہے تھے بام و در
زہر اگر نہیں تھا وہ آخری جام تھا ضرور
یونہی نہیں تمام عمر سجدے میں ہی گزر گئی
عشق کی اُ س نماز کا کوئی امام تھا ضرور
یاد ابھی نہیں ہمیں ذہن پہ زور دے چکے
تم سے ہی ملنے آئے تھے ، تم سے ہی کام تھا ضرور
تم نے جب اُس کی بات کی تم پہ بھی پیار آگیا
چوما نہیں تمہیں میاں گرچہ مقام تھا ضرور
آپ مجھے بھلا چکے یاد تو کیجئے جناب
میری بھی اک شناخت تھی میرا بھی نام تھا ضرور